قصور کا سانحہ اور ہم

rtx1nprjاس میں کوئی دو رائے نہیں کہ قصور کا سانحہ بہت تکلیف دہ ہے اور ہر کوئی اس کی مذمت کر رہا ہے۔ تاہم ہمیں یہ سوچنا ہو گا کہ محض مذمت سے کام نہیں چلے گا اور ہمیں بحیثیت قوم کچھ سوچنا ہوگا، کچھ کرنا ہوگا۔ ہمیں یہ بات نہیں بھولنی چاہئے کہ قصور کا واقعہ محض ایک اکلوتا واقعہ نہیں ہے بلکہ ہمارے ملک میں ہونے والے بچوں کے جنسی استحصال کی ایک معمولی سی جھلک ہے۔ بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات اس سے کہیں زیادہ ہو رہے ہیں۔ 

سب سے پہلے تو ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم اپنے اپنے گریبانوں میں جھانکیں اور یہ سوچیں کہ گزشتہ تیس سے چالیس سال کی مذہبیت نے ہمیں کیا دیا ہے۔ اسلامیات کا مضمون لازمی قرار دیے جانے ، مدرسوں کی تعداد میں کئی گنا اضافے، اور تبلیغ کے اجتماعات میں بے پناہ شرکت کے باجود ایسا کیا ہے کہ ہم بحیثیت معاشرہ اور قوم ذلالت کی گہرائیوں میں گرتے چلے جا رہےہیں؟ لالاجی ان وجوہات کا یہاں احاطہ کرنے نہیں جا رہے، بلکہ یہ سوال پوری قوم کے سامنے رکھ رہے ہیں۔ یہ کام اکیلے لالاجی کے یا کسی بھی فرد کے اکیلے کرنے کا نہیں۔ 

ہم عام طور پر لوگوں سے سنتے ہیں کہ ہم جو کچھ بھی کر رہے ہیں جی اپنے بچوں کے لئے کر رہے ہیں۔ ہر شخص اپنے بچوں کو بہتر زندگی اور بہتر مستقبل دینے کے لئے جدو جہد کر رہا ہے۔ تاہم ہم نے کبھی بھی بحیثیت قوم اور ریاست یہ نہیں سوچا کہ ہم اپنے بچوں کے لئے کیا کر رہے ہیں۔ ہمارے بچے (لالاجی میرے یا آپ کے بچوں کی نہیں، سارے پاکستانی بچوں کی بات کررہے ہیں) گلیوں میں پڑے ہوئے ہیں۔ بسوں کے اڈوں، مدرسوں، ریلوے اسٹیشنوں اور پبلک پارکوں میں روزانہ کی بنیاد پر ہزاروں بچے جنسی زیادتی کا نشانہ بنتے ہیں۔ 

آخر ہم یہ میٹرو کیوں بنا رہے ہیں؟ ہم نے ایٹم بم کیوں بنایا؟ ہم ہندوستان کے ساتھ کیا مقابلہ کر رہے ہیں؟ ہم روز نت نئے میزائلوں کے تجربات کیوں کیے جارہےہیں؟ کیا ہم یہ سب اپنے بچوں کو تحفظ ، اچھی زندگی اور خوشگوار مستقبل دینے کے لئے کر رہےہیں؟آخر ان بڑے بڑے منصوبوں کا کیا فائدہ اگر ہمارے بچے محفوظ نہیں؟ 

کیا ہم بحیثیت قوم بھی اپنے بچوں کے لئےوہ سب کچھ کر رہے ہیں جو ہم انفرادی حیثیت میں کرنے کا دعویٰ کرتے ہیں؟ یا اپنے بچوں کے لئے کچھ کرنا محض اپنی انفرادی حیثیت میں صرف اپنے بچوں کےلئے کرتے ہیں؟  ہمیں ایک بات اچھی طرح پلے باندھ لینی چاہئے اور وہ یہ کہ اگر ہم اجتماعی طور پر اپنے بچوں کے لئے کچھ نہیں کر رہے تو جو کچھ ہم انفرادی طور پر کر رہے ہیں وہ ہمارے بچوں کے تحفظ کے لئے کافی نہیں کیوں کہ ہمارے بچے چھوٹے چھوٹے انفرادی جزیروں پر نہیں اس معاشرے کے سمندر میں رہتے ہیں۔ 

اس واقعہ نے ایک بار ہمارے اس جھوٹ کا پول کھول دیا ہے کہ ہم بہت شرم و حیا والے لوگ ہیں اور ہماری اخلاقیات مغرب سے بہت برتر ہیں۔ لالاجی کو تو بس ساحر لدھیانوی کی نظم یاد آرہی ہے: 

ثناء خوانِ تقدیسِ مشرق کہاں ہیں؟ 

ثناء خوان، تقدیسِ مشرق کو لاؤ

یہ کوچے، یہ گلیاں، یہ منطر دکھاؤ

کیا ہم ایک بار پھر ریت میں سر دے کر یہ کہیں کہ ’نہیں یہ کسی مسلمان کا کام ہو ہی نہیں سکتا‘، ’یہ ہمارے خلاف سازش ہے‘، ’یہ پاکستان کو بدنام کرنے کی کوشش ہے‘۔ ہمارے پاس یہ ایک موقع ہے اپنے اپنے گریبانوں میں جھانکنے کا۔ اپنی جھوٹی اناؤں کو ایک طرف رکھ کر صورت حال کا جائزہ لینے کا اور یہ فیصلہ کرنے کا ہم خود سے بھی اور دنیا سے بھی جھوٹ بولنا بند کر دیں گے۔

ہمیں ایک طرف ملا کو اپنے سر سے اتار پھینکنا ہے جو اس قسم کے جرائم کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیتا ہے یا اس قسم کے جرائم کو چھپانے کی تلقین کرتا ہے (جیسا کہ منور حسن نے ایک انٹرویو میں کہا کہ اگر عورت کے پاس چار گواہ نہیں ہیں تو اسے خاموش رہنا چاہئے)۔ اس واقعہ میں بھی اگر پہلے بچے کے والدین ہی پولیس یا میڈیا کے پاس چلے جاتے تو یہ گروہ اتنی مدت تک سینکڑوں بچوں کو ذلیل نہ کر پاتا۔ جرم کو چھپانا جرم کو ہوا دینا ہے۔ 

ہم بحیثیت قوم جرم کی روک تھام میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتے بلکہ جرائم کے لئے سخت سزاؤں پر یقین رکھتے ہیں۔ اس وقت بھی بہت سے لوگ مجرموں کو سرِ عام پھانسی دینے کا مطالبہ کر رہے ہیں کوئی بھی اس بات پر غور کرنے کو تیار نہیں کہ وہ کیا حالات تھے جنہوں نے اس گھناؤنے کھیل کے اتنی لمبی مدت تک جاری رہنے میں مدد دی۔ ایسا کیا کیا جائے کہ آئندہ ایسے حالات پیدا نہ ہوں۔ 

سیکس ایجوکیشن ایک اور اہم چیز ہے جس کے بارے میں کچھ بھی جانے بغیر ہم اس کے سخت خلاف ہیں۔ لالاجی اس حوالے سے پہلے ہی ایک بلاگ "ہمارے مغالطے: سیکس ایجوکیشن میں سیکس کے طریقے سکھائے جاتے ہیں” کے عنوان سے لکھ چکے ہیں (اور یہ بلاگ آئینہ کا سب سے زیادہ پاپولر بلاگ ہے)۔ ہمیں اپنے بچوں کے ساتھ جنس کے موضوع پر بات کرنی ہوگی۔ چنانچہ مہنگے انگریزی میڈیم سکول ہوں یا سرکاری سکول کہیں بھی جنسی تعلیم دینے کی بات کی جائے تو ہمارے کان سرخ ہو جاتے ہیں اور پھر ہم غصے سے پاگل ہو کر بات کرنے والے کو کاٹ کھانے کو دوڑتے ہیں۔ اگر ہمارے ہاں سیکس کے حوالے سے بات کرنا اتنا معیوب نہ سمجھا جاتا، جنسی تعلیم عام ہوتی تو یہ ہمیں یہ صورت حال درپیش نہ ہوتی۔ یہ بچے خودکشیاں کرنے کا نہ سوچ رہے ہوتے۔ سچی بات تو یہ ہے کہ ہمارے معاشرے میں اتنی گھٹن نہ ہوتی تو اس طرح کی ویڈیوز بنانے اور انہیں فروخت کرنے کا کاروبار اتنا منافع بخش ہی نہ ہوتا اور لوگ اس کاروبار کی طرف نہ جاتے۔ 

آج بھی اس واقعے کے خلاف سڑکوں پر نکل کر احتجاج کرنے والوں کی تعداد دیکھ کر تو لگتا ہے کہ ہماری قوم کو اپنے بچوں سے کوئی دلچسپی نہیں۔ کسی کے پاس اتنا وقت نہیں ہے کہ اس واقعے کے خلاف سخت احتجاج کرے۔ بچوں کی زندگیاں بہتر کرنے کے لئے عملی اقدامات کا مطالبہ کرے۔ اس صورت حال میں لالاجی کو مستقبل قریب میں پاکستان کے بچوں کے حالات بہتر ہوتے نظر نہیں آتے۔ 

Advertisements

ایک خیال “قصور کا سانحہ اور ہم” پہ

  1. بہت اچھا تجزیہ ! بچوں کو اس معاشرے میں ویسے بھی زیادہ اہمیت نہیں دی جاتی اسی لیے ایسے بہت سے جرایم تو سامنے ھی نہیں آتے جب تک کہ وہی بچے جوان ہوکر خود بھی ان جرایم کو کرنے والے نہ بن جائیں ! بچوں کے ساتھ ایسے جرایم میں 10 نمایاں شہروں میں پنجاب کے آٹھ شہر شامل ہونے کا واضح مطلب ہے کہ آبادی میں اضافہ خاندان کی طرف سے بے توجہگی پیدا کرتا ہے ! بچے کم ہوں تو شاید انکی دیکھ بھال ہو اور نظر داری بھی مگر یہاں تو ہماری بلا جانیں کہ بچے کس حال میں ہیں کس کے پاس آتے جاتے ہیں ، کب خا موش اور پریشان رہتے ہیں کیوں اسکول سے غایب رہتے ہیں ! اور زیادتی کرنے والوں کو سیدھی راہ پر لانے والوں کے بارے میں کیا کہوں ! مسجد ؤ منبر سے کچھ اچھا بتانے والے وینا اور میرا کو راہ راست پر لا کر مطمین ہیں کہ جنت پکی 😦

جواب دیں

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s