دھاندلی، دھرنا انکوائری اور تحریکِ انصاف


judicialcommission-electionrigging-PTI-PML-N-polls_4-9-2015_180893_lحالیہ دنوں میں سال ۲۰۱۳ء میں ہونے والے انتخابات  میں مبینہ دھاندلی کے حوالے سے انکوائری کمیشن کی رپورٹ منظرعام پر آ گئی ہے۔ عمران خان کے مخالفین اس کے لتے لے رہے ہیں تو حامی صفائیاں پیش کر رہے ہیں۔ یہ بلاگ اس ساری کہانی کا غیر جانبدارانہ انداز میں تجزیہ کرنے کی کوشش ہے اور یہ سمجھنے کی کوشش ہے کہ عمران خان سے درحقیقت کہاں غلطیاں ہوئیں ہیں۔ 

عمران خان نے ایک سو چھبیس دن کا دھرنا دے کر قوم کا وقت اور وسائل ضائع کئے۔کل ایک خبر چھپی ہے جس میں یہ ذکر ہے کہ تحریک انصاف کے لیڈروں سے عمران خان نے غیر رسمی مشاورت کی ہے اور اس کے نتیجے میں تحریک انصاف کے لیڈروں نے کچھ فیصلے کئے ہیں جن میں ایک اہم فیصلہ شیخ رشید کو پارٹی معاملات سے باہر کرنا، اسمبلی میں دوبارہ بھرپور شرکت کرنا اور سب سے بڑھ کر انتخابی اصلاحات کے حوالے سے بننے والی کمیٹی میں بھرپورشرکت کرنا شامل ہیں۔ یہ سب بہت خوش آئند باتیں ہیں۔ لگتا ہے کہ عمران خان نے اس سارے تماشے سے کچھ نہ کچھ سبق سیکھا ضرور ہے اگرچہ یہ سبق قوم کو بہت منہگا پڑا ہے۔ 

مہنگا اس لئے کہ جب لانگ مارچ کا آغاز کیا گیا تو نواز شریف نے قوم سے خطاب کیا اور یہ تجویز پیش کی کہ سپریم کورٹ کے ججوں پر مشتمل ایک کمیشن قائم کیا جائےگا جو انتخابات میں ہونے والے دھاندلی کی تحقیقات کرے گا۔ مگر اس وقت عمران خان کو امپائر پر پورا بھروسہ تھا اس لئے عمران خان حکومت کا دھڑن تختہ کرنے میں زیادہ دلچسپی لے رہا تھا۔ جب امپائر مافیہ نے اپنا کام نکال لیا تو عمران خان کو اکیلا چھوڑ دیا۔ دیگر سیاسی پارٹیوں نے عمران خان اور امپائر کا گٹھ جوڑ سمجھ لیا تھا اس لئے کوئی سیاسی پارٹی (بشمول جماعت اسلامی) عمران خان کے ساتھ کھڑی نہیں ہوئی۔ ایسے میں عمران خان کو کنٹینر سے نیچے اتر کر انکوائری کمیشن پر راضی ہونا پڑا۔ ایک سو چھبیس کے احتجاج کے بعد بھی اسی کمیشن پر راضی ہوجانا جس کی تجویز پہلے ہی دی گئی تھی اپنی جگہ ایک شکست تھی، فتح نہیں تھی۔ 

کمیشن قائم ہونے کے بعد  مسئلہ یہ ہوا کہ انکوائری کمیشن کے سامنے ثبوت پیش کرنے پڑتے ہیں کہ جو عمران خان کے پاس نہیں تھے۔ پینتیس پنکچر والی کہانی کو جب عمران خان نے یہ کہا کہ سیاسی بیان ہے۔(ویسے  عمران خان اور نواز شریف میں کیا فرق رہ گیا۔ نواز شریف نے بھی شہباز شریف کے لوڈ شیڈنگ چھ ماہ میں ختم کرنے کے بیان کو سیاسی بیان کہا تھا۔)اپنی تازہ ترین پریس کانفرنس میں بھی عمران خان نے کہا کہ آر اوز اور الیکشن کمیشن کے لوگ نواز شریف کے ساتھ ملے ہوئے تھے۔ تاہم انکوائری کمیشن کے سامنے کسی آر او کو پیش کرنے کا مطالبہ نہیں کیا گیا۔ کسی آر او کا نام نہیں لیا گیا۔ دھرنے کے آغاز پر ایک برگیڈئیر صاحب کا بھی ذکر ہوا تھا وہ بھی ہوا ہو گیا۔

لالاجی کا موقف یہ ہر گز نہیں کہ انتخابات میں کوئی گڑ بر نہیں ہوئی۔ تاہم منظم دھاندلی کے الزام میں جان نہیں ہے۔ انتخابات میں بے قاعدگیاں ہوئیں اور بہت ہوئیں جیسے حلقوں اور پولنگ اسٹیشنوں کے فارم غائب ہیں یا ٹھیک سے پُر نہیں کئے گئے۔ یاد رہے کہ انتخابات کا قانون کے مطابق نہ ہونا، ان میں بے قاعدگیاں ہونا اور منظم دھاندلی دو قطعی مختلف باتیں ہیں۔ بے قاعدگیاں تمام حلقوں میں ہوئی ہیں جن میں تحریک انصاف کے امیدوار جیتے ان میں بھی۔ چنانچہ یہ بات یقین سے کہی جا سکتی ہے کہ اگر یہ بے قاعدگیاں نہ ہوتیں تو بھی نتائج کم و بیش یہی ہوتے۔

مثال کے طور پر فارم ۱۵ کے غائب ہونے کا بہت شور ہے۔ مگر کیا فارم ۱۵ صرف پنجاب کے حلقوں کے غائب ہیں۔ پختونخواہ میں42.5 فیصد ،قبائلی علاقہ جات میں12فیصد ، پنجاب میں 28.8 فیصد ،سندھ میں 45.9 فیصدجبکہ بلوچستان میں 48فیصد فارم 15ریکارڈ سے غائب پائے گئے یا نہیں مل سکے ۔ تو پھر دھاندلی کہاں زیادہ ہوئی؟ (ان حقائق کے باوجود سپریم کورٹ کے ججوں کی کردارکشی کی مہم جاری ہے۔) 

ضرورت اس امر کی ہے کہ ان الیکشن کے نظام میں ان بے قاعدگیوں کو ختم کرنے کے لئے اور خامیوں کو دور کرنے کے لئے اقدامات کئے جائیں۔ جب یہ بے قاعدگیاں نہیں ہوں گی، نظام میں خامیاں دور ہو جائیں گی تو انتخابات میں دھاندلی کے امکانات بھی کم ہو جائیں گے اور اگر دھاندلی ہوگی تو اسے ثابت کرنا بھی آسان ہو جائے گا۔ 

لالاجی پھر یہ کہیں گے کہ جمہوریت کے ثمرات کے لئے ضروری ہے کہ جمہوری نظام چلتا رہے۔ جمہوری نظام کو بار بار پٹڑی سے اتار دینا اپنی جگہ دھاندلی کے لئے راستہ ہموار کرنا ہے۔ اگر مقامی، صوبائی اور وفاقی سطح پر جمہوری حکومتیں قائم ہوں اور باقاعدگی سے انتخابات ہوتے رہیں تو الیکشن کمیشن کا عملہ تربیت یافتہ ہوجائے گا اور انتخابات کے نظام کو اتنی اچھی طرح سمجھ جائے گا کہ بے قاعدگیاں خود بخود کم ہو جائیں گی۔ ایک بڑا مسئلہ یہ بھی ہے کہ الیکشن کمیشن کے پاس اپنا انتخابی عملہ ہی نہیں ہے۔ جب انتخابات کرانا ہوتے ہیں تو ادھر ادھر سے لوگ پکڑ کر ایک ایک دو دو دن کی تربیتی ورکشاپ کی جاتی ہیں اور ان ناتجربہ کار اور نیم تربیت یافتہ لوگوں کے ہاتھ میں انتخابات کا سارا نظام دے دیا جاتا ہے۔ 

لالاجی کو خوشی ہے کہ تحریک ِ انصاف نے انتخابی اصلاحات کے حوالے سے بنائی گئی پارلیمانی کمیٹی میں بھرپور شرکت کا فیصلہ کیا ہے۔ انتخابی نظام کو شفاف بنانے کا یہی واحد راستہ ہے۔ وہ پنجابی میں کہتے ہیں کہ "حالی وی ڈلیاں بیراں دا کچھ نئیں گیا”۔ ابھی بھی کچھ نہیں بگڑا۔ انتخابی اصلاحات کریں اور انتخابات کا نظام ایسا بنائیں کہ دھاندلی کی گنجائش نہ رہے اور اگر ہو تو اسے پکڑنا اور ثابت کرنا آسان ہو۔